Thursday, August 9, 2012

پاک گنز کی اک جی ٹی جی تھی

پاک گنز کی اک جی ٹی جی تھی
 اور پاک پلازہ میں کی تھی

دن کو ساون ٹوٹ کر برسا
 اور رات بھی بھیگی بھیگی تھی
 قھقے سرگوشیوں گنز اور مونچھیں
 بات کہاں اور کس کس ڈھنگ کی تھی

پنجاب کے سارے ھی رنگ تھے
 سرائیکی لاہوری پھوٹھو ہاری سنگ تھے
 مت پوچھ افطاری کا کیا عالم تھا
 ہوٹل والے بھی تو تنگ تھے
کچھ باتیں ابھی ادھوری ہیں

 اور خلوص کی کشش باقی ہے
 پر دل میں اک یاد تو جاگی ہے
کہ
پاک گنز کی اک جی ٹی جی تھی
 اور پاک پلازہ میں کی تھی



Monday, September 19, 2011

کچھ حادثوں سے انجم گر گے ہیں زمین پر

کچھ حادثوں سے  انجم  گر  گے  ہیں  زمین  پر
ہم بھی رشک آسمان تھے ابھی کل کے بات ہے

Sunday, February 27, 2011

Poetry: Aasmaan say zameen ke haad main ah gaya hoon

آسمان سے زمین کی حد میں آ گیا ہوں 
میں کسی کی بددعاؤں کی زد میں آ گیا ہوں 

مرے دوستو میرا ماتم برپا کرو 
کہ میں حرف کربلا کی شد میں آ گیا ہوں

تیری رحمت پے سوال اٹھا بیٹھا ہوں اے خدا 
 میں مومن ہوں کہ کسی حد میں آ گیا ہوں 

یہ کسی کی محبت کا احجاز ہے جہانگیر 
کہ اب میں اپنے خال و خد میں آ گیا ہوں